Aah O Faryad Se Mamoor Chaman Hai Ke Ju Tha

آہ و فریاد سے معمور چمن ہے کہ جو تھا

آہ و فریاد سے معمور چمن ہے کہ جو تھا

مائل جور وہی چرخ کہن ہے کہ جو تھا

حسن پابندیٔ آداب جفا پر مجبور

عشق آوارہ سر کوہ و دمن ہے کہ جو تھا

لاکھ بدلا سہی منصور کا آئین حیات

آج بھی سلسلۂ دار و رسن ہے کہ جو تھا

ڈر کے چونک اٹھتی ہیں خوابوں سے نویلی کلیاں

خندۂ گل میں وہی ساز محن ہے کہ جو تھا

شبنم افشانیٔ گلشن ہے دم صبح ہنوز

لالہ و گل پہ وہ اشکوں کا کفن ہے کہ جو تھا

دل بے تاب پہ ماضی کی نوازش ہے وہی

شب مہتاب پہ یادوں کا گہن ہے کہ جو تھا

ہاتھ رکھ دیتا ہے شانے پہ تصور ان کا

غم کی راتوں میں کوئی جلوہ فگن ہے کہ جو تھا

انہیں کیا فکر کہ پوچھیں دل بیمار کا حال

بے نیازانہ وہ انداز سخن ہے کہ جو تھا

لاکھ بدلا سہی اے فوقؔ زمانہ لیکن

تیرے انداز میں بے ساختہ پن ہے کہ جو تھا

حنیف فوق

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(534) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Hanif Fouq, Aah O Faryad Se Mamoor Chaman Hai Ke Ju Tha in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Ghazal, and the type of this Nazam is Love, Sad, Social, Friendship, Bewafa, Heart Broken, Hope Urdu Poetry. Also there are 11 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.7 out of 5 stars. Read the Love, Sad, Social, Friendship, Bewafa, Heart Broken, Hope poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Hanif Fouq.