Dil Nadan Pey Shikayat Ka Gumaan Kiya Ho Ga

دل ناداں پہ شکایت کا گماں کیا ہوگا

دل ناداں پہ شکایت کا گماں کیا ہوگا

چند اشکوں سے جفاؤں کا بیاں کیا ہوگا

شب کے بھٹکے ہوئے راہی کو خبر دے کوئی

صبح رنگیں کی بہاروں کا نشاں کیا ہوگا

نالہ‌ٔ مرغ گرفتار سے بے زاری کیا

گوش صیاد پہ اب یہ بھی گراں کیا ہوگا

سچ کے کہنے سے اگر جی کا زیاں ہوتا ہے

سچ بہرحال ہے سچ مہر دہاں کیا ہوگا

چپ رہیں ہم تو سر دار پکارے گا لہو

چند ہی روز میں آئین جہاں کیا ہوگا

ذرہ ذرہ پہ کوئی پھونکے گا افسون بہار

مانع جوش نمو جور خزاں کیا ہوگا

چشم نرگس کو ہوس ہے کہ چمن میں دیکھے

آتش گل کے بھڑکنے کا سماں کیا ہوگا

اب تو ہم شہر نگاراں سے چلے آئے ہیں

باعث‌ وحشت دل حسن بتاں کیا ہوگا

حنیف فوق

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(1388) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Hanif Fouq, Dil Nadan Pey Shikayat Ka Gumaan Kiya Ho Ga in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Ghazal, and the type of this Nazam is Love, Sad, Social, Islamic, Bewafa, Heart Broken, Hope Urdu Poetry. Also there are 11 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.2 out of 5 stars. Read the Love, Sad, Social, Islamic, Bewafa, Heart Broken, Hope poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Hanif Fouq.