Jism O Jaan Kis Ghaam Ka Gehwara Baney

جسم و جاں کس غم کا گہوارہ بنے

جسم و جاں کس غم کا گہوارہ بنے

آگ سے نکلے تو انگارہ بنے

شام کی بھیگی ہوئی پلکوں میں پھر

کوئی آنسو آئے اور تارا بنے

لوح دل پہ نقش اب کوئی نہیں

وقت ہے آ جاؤ شہ پارا بنے

اب کسی لمحہ کو منزل مان لیں

در بدر پھرتے ہیں بنجارا بنے

کم ہو گر جھوٹے ستاروں کی نمود

یہ زمیں بھی انجمن آرا بنے

جرم ناکردہ گناہی ہے بہت

زندگی ہی کیوں نہ کفارہ بنے

توڑ ڈالیں ہم نظام خستگی

یہ جہاں کہنہ دوبارا بنے

حنیف فوق

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(437) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Hanif Fouq, Jism O Jaan Kis Ghaam Ka Gehwara Baney in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Ghazal, and the type of this Nazam is Love, Sad, Social, Friendship, Bewafa, Heart Broken, Hope Urdu Poetry. Also there are 11 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.4 out of 5 stars. Read the Love, Sad, Social, Friendship, Bewafa, Heart Broken, Hope poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Hanif Fouq.