Kiya Nazar Ki Hoshiyari Khud Aseer Masti Hai

کیا نظر کی ہشیاری خود اسیر مستی ہے

کیا نظر کی ہشیاری خود اسیر مستی ہے

جو نگاہ اٹھتی ہے محو خود پرستی ہے

بادلوں کو تکتا ہوں جانے کتنی مدت سے

ایک بوند پانی کو یہ زباں ترستی ہے

اک جنم کے پیاسے بھی سیر ہوں تو ہم جانیں

یوں تو رحمت یزداں چار سو برستی ہے

رات غم کی آئی ہے ہوشیار دل والو

دیکھنا ہے یہ ناگن آج کس کو ڈستی ہے

شاید آج آئینہ دل کا ٹوٹ ہی جائے

پھر نظر کی ویرانی زندگی پہ ہنستی ہے

میں نے اپنی پلکوں پر غم کدے سجائے ہیں

آرزو کے ماتم میں سوگوار ہستی ہے

اب بتابش اختر تیرگی ہے افزوں تر

روشنی بھی بک جائے یہ کمال‌ پستی ہے

حنیف فوق

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(541) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Hanif Fouq, Kiya Nazar Ki Hoshiyari Khud Aseer Masti Hai in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Ghazal, and the type of this Nazam is Love, Sad, Social, Friendship, Bewafa, Heart Broken, Hope Urdu Poetry. Also there are 11 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.8 out of 5 stars. Read the Love, Sad, Social, Friendship, Bewafa, Heart Broken, Hope poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Hanif Fouq.