Meri Yahat Agar Pazda Seher Bhi Nahi

مری حیات اگر مژدۂ سحر بھی نہیں

مری حیات اگر مژدۂ سحر بھی نہیں

ستم یہ ہے کہ ترے غم کی رہ گزر بھی نہیں

چمن میں ہوں میں پریشان مثل موج نسیم

چٹک کے غنچے کہیں گے ہمیں خبر بھی نہیں

نشاط و کیف کے لمحوں ذرا ٹھہر جاؤ

بہار راہ میں ہے دور کا سفر بھی نہیں

میں تیری جنبش مژگاں سے کانپ جاتا ہوں

اگرچہ دل کو غم دو جہاں سے ڈر بھی نہیں

فریب وعدہ پہ ہم تا ابد جئیں لیکن

ہزار حیف یہ امکان عمر بھر بھی نہیں

کوئی تو ہمدم دیرینہ دے صدا اس دم

وہ اجنبی ہوں کہ مانوس اپنا گھر بھی نہیں

نسیم سر بہ گریباں صبا ہے سر گرداں

وہ وقت ہے کوئی خوشبو کا راہبر بھی نہیں

زمین پر ہی کہیں نور کا سراغ لگاؤ

ستارے ڈوب گئے چرخ پر قمر بھی نہیں

کٹی ہے آنکھوں ہی آنکھوں میں شام ہجر مگر

شب دراز الم اتنی مختصر بھی نہیں

کسی کی نرم نگاہی کی آنچ ہے ورنہ

یہ دل پذیر نوا جلوۂ ہنر بھی نہیں

ہوائے شام سے کتنے چراغ جل اٹھے

دیار دل میں تمنا کا اک شرر بھی نہیں

نہ جانے کیوں در زنداں بھی کانپ اٹھتا ہے

صدائے‌ فوقؔ اگر ایسی کارگر بھی نہیں

حنیف فوق

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(504) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Hanif Fouq, Meri Yahat Agar Pazda Seher Bhi Nahi in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Ghazal, and the type of this Nazam is Love, Sad, Social, Friendship, Bewafa, Heart Broken, Hope Urdu Poetry. Also there are 11 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.6 out of 5 stars. Read the Love, Sad, Social, Friendship, Bewafa, Heart Broken, Hope poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Hanif Fouq.