Rat Dhalte Hi Safeeran E Qamar Ate Hain

رات ڈھلتے ہی سفیران قمر آتے ہیں

رات ڈھلتے ہی سفیران قمر آتے ہیں

دل کے آئینے میں سو عکس اتر آتے ہیں

سیل مہتاب سے جب نقش ابھر آتے ہیں

اوس گرتی ہے تو پیغام شرر آتے ہیں

ساعت دید کا گلزار ہو یا سایۂ دار

ایسے کتنے ہی مقامات سفر آتے ہیں

جاگتی آنکھوں نے جن لمحوں کو بکھرا دیکھا

وہی لمحے مرے خوابوں میں نکھر آتے ہیں

وقت کی لاش پہ رونے کو جگر ہے کس کا

کس جنازے کو لیے اہل نظر آتے ہیں

رات کی بات ہی کیا رات گئی بات گئی

رات کے خواب کہیں دن کو نظر آتے ہیں

وادیٔ غرب سے پیہم ہے اندھیروں کا نزول

مطلع شرق سے پیغام سحر آتے ہیں

حنیف فوق

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(619) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Hanif Fouq, Rat Dhalte Hi Safeeran E Qamar Ate Hain in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Ghazal, and the type of this Nazam is Love, Sad, Social, Friendship, Bewafa, Heart Broken, Hope Urdu Poetry. Also there are 11 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.1 out of 5 stars. Read the Love, Sad, Social, Friendship, Bewafa, Heart Broken, Hope poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Hanif Fouq.