Aankh Ki Raah Se Bujhaty Hue Lamhay Utre

آنکھ کی راہ سے بجھتے ہوئے لمحے اترے

آنکھ کی راہ سے بجھتے ہوئے لمحے اترے

اقربا جتنے تھے کشتی کے وہ سارے اترے

اس سے کہتے ہو کہ پھر لوٹنا ہوگا چھت پر

سانس کی لے کو جو تھامے ہوئے زینے اترے

چھا گئی بچوں کے چہرے پہ نئی ہریالی

آج پھر پیڑوں سے آنگن میں پرندے اترے

لوگ ساحل پہ تماشائی بنے بیٹھے رہے

بیچ دریا میں فقط ہم ہی اکیلے اترے

چیخ نکلی نہ کوئی آہ و فغاں کی میں نے

یوں تو سینے میں کئی تیر نکیلے اترے

حسن نظامی

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(377) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of HASAN NIZAMI, Aankh Ki Raah Se Bujhaty Hue Lamhay Utre in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Ghazal, and the type of this Nazam is Social Urdu Poetry. Also there are 11 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.4 out of 5 stars. Read the Social poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of HASAN NIZAMI.