Mein Ghar Se Zehen Mein Kuch Sochta Nikal Aaya

میں گھر سے ذہن میں کچھ سوچتا نکل آیا

میں گھر سے ذہن میں کچھ سوچتا نکل آیا

سڑک پہ خوف کا اک سلسلہ نکل آیا

وہ ایک درد شگفتہ گلاب ہو کر بھی

بدن پہ زخم سا جیسے نیا نکل آیا

سلگتی دھوپ نے اس درجہ کر دیا بے تاب

مجھی سے سایہ میرا ہانپتا نکل آیا

سفید پوشوں کی توقیر کے تحفظ میں

ہمارے شہر کا طبقہ بڑا نکل آیا

مجھے وہ رکھتا ہے مصروف کس نزاکت سے

کہ غم سے رشتہ مرا دوسرا نکل آیا

وہ ایک لمس تھا اس کا حیات کا ضامن

چھوا جو پیڑ تو پتہ ہرا نکل آیا

حسن نظامی

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(707) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of HASAN NIZAMI, Mein Ghar Se Zehen Mein Kuch Sochta Nikal Aaya in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Ghazal, and the type of this Nazam is Social Urdu Poetry. Also there are 11 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.8 out of 5 stars. Read the Social poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of HASAN NIZAMI.