Hum Baat Tere Moun Pey Khari Karne Lage Hain

ہم بات ترے منہ پہ کھری کرنے لگے ہیں

ہم بات ترے منہ پہ کھری کرنے لگے ہیں

جا تجھ کو تخیل سے بری کرنے لگے ہیں

ہاں راس نہیں ہم کو محبت کا خزانہ

تھک ہار کے ہم سوداگری کرنے لگے ہیں

مٹی سے بنایا تھا جو ساحل پہ گھروندا

کچھ بچے اسے بارہ دری کرنے لگے ہیں

اس واسطے لہجے کو بدل ڈالا ہے ہم نے

خوشاب کو ہم دیکھ مری کرنے لگے ہیں

مدت سے تخیل میں تھی جو مورتی تیری

ہم اب کے اسے چھو کے پری کرنے لگے ہیں

جو لوگ نہیں جانتے مٹی کی حقیقت

وہ لوگ بھی اب کوزہ گری کرنے لگے ہیں

قربان حسنؔ ایسے فقیروں پہ مرا دل

جو پیڑ کے پتوں کو دری کرنے لگے ہیں

حسیب الحسن

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(591) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Haseebul Hasan, Hum Baat Tere Moun Pey Khari Karne Lage Hain in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Ghazal, and the type of this Nazam is Love, Sad, Social, Friendship, Bewafa, Heart Broken, Hope Urdu Poetry. Also there are 10 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.4 out of 5 stars. Read the Love, Sad, Social, Friendship, Bewafa, Heart Broken, Hope poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Haseebul Hasan.