Main Ghareeb Tha Sahii Par Mera Ishq Tha Nirala

میں غریب تھا سہی پر مرا عشق تھا نرالا

میں غریب تھا سہی پر مرا عشق تھا نرالا

چلو یاد تو کرے گا مجھے بھول جانے والا

نہ جلاؤ ریگ تفتہ مرے دل کو یوں خدا را

کہیں پھٹ گیا جو دیکھو مرے پاؤں کا یہ چھالا

کبھی شعر میں سراہا کبھی نظم میں پرویا

میں نے آتش نہاں سے ترے حسن کو اجالا

مری جان کی اماں ہو میں نے کی بیاں حقیقت

نہیں ہضم ہوگا تجھ کو یہ غریب کا نوالہ

میں زمیں میں گڑ گیا تھا تجھے دیکھ کر نشے میں

میاں کل جو مغبچوں نے تری پگڑی کو اچھالا

مجھے شرم آ رہی ہے ہرے باغ مت دکھانا

تجھے یاد ہو جو ننگا بھرے باغ سے نکالا

حاوی مومن آبادی

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(379) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Havi Momin Abadi, Main Ghareeb Tha Sahii Par Mera Ishq Tha Nirala in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Ghazal, and the type of this Nazam is Love, Sad, Social, Friendship, Bewafa, Heart Broken, Hope Urdu Poetry. Also there are 13 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.1 out of 5 stars. Read the Love, Sad, Social, Friendship, Bewafa, Heart Broken, Hope poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Havi Momin Abadi.