Dard Mushtarak

درد مشترک

میں اب تک یہ سمجھتی تھی

کہانی کا نہ دل ہے

اور نہ گویائی

سلیقہ ہی نہیں انکار کا اس کو

ہمیشہ لکھنے والے کی

رضا پر چھوڑ دیتی ہے

وجود اپنا

کبھی منہ سے نہیں کہتی

کہ مجھ کو اس طرف موڑو

جدھر میں چاہتی ہوں

اور یہاں تک کہ

کئی کردار مر جاتے ہیں

پھر بھی آنکھ سے اس کی

کبھی آنسو نہیں گرتے

کہانی کتنی صابر ہے

کبھی آغاز ہی ملتا نہیں اس کو

کبھی انجام سے محروم رہتی ہے

کبھی ایسا بھی ہوتا ہے

کہ افسانے کا خالق

اپنے افسانے میں اس کو

پاؤں بھی دھرنے نہیں دیتا

تو یہ خاموشی سی

اک کرب کی چادر میں

اپنا منہ چھپائے

لوٹ جاتی ہے

کوئی شکوہ نہیں کرتی

مگر کل شب

میں جب تنہائی میں بیٹھی

کہانی لکھ رہی تھی تو

مجھے ایسا لگا جیسے

ورق پر ایک آنسو ہے

جو میں نے غور سے دیکھا

جہاں عورت لکھا میں نے

وہیں وہ اشک ٹپکا تھا

حمیرا راحت

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(340) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Humaira Rahat, Dard Mushtarak in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Nazam, and the type of this Nazam is Love, Sad, Social, Friendship, Bewafa, Heart Broken, Hope Urdu Poetry. Also there are 5 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.9 out of 5 stars. Read the Love, Sad, Social, Friendship, Bewafa, Heart Broken, Hope poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Humaira Rahat.