Muqadar Ho Chuka Hai Bedar O Dewar Rehna

مقدر ہو چکا ہے بے در و دیوار رہنا

مقدر ہو چکا ہے بے در و دیوار رہنا

کہیں طے پا رہا ہے شہر کا مسمار رہنا

نمودِ خواب کے اور انہدامِ خواب کے بیچ

قیامت مرحلہ ہے دل کا ناہموار رہنا

دلوں کے درمیاں دوری کے دن ہیں اور ہم کو

اسی موسم میں تنہا برسرِ پیکار رہنا

اندھیری رات اور شورِ سگان کوئے دُشنام

اور ایسے میں کسی اک آنکھ کا بیدار رہنا

تماشا کرنے والے آ رہے ہیں جوق در جوق

گروہ ِپابجولاں! رقص کو تیار رہنا

ہوائے کوئے قاتل بے ادب ہونے لگی ہے

چراغِ جادهٔ صدق و صفا ہشیار رہنا

یہ دشواری تو آسانی کا خمیازہ ہے ورنہ

بہت ہی سہل تھا ہم کو بہت دشوار رہنا

ادھر کچھ دن سے اس بستی کو راس آنے لگا ہے

ہم آشفتہ سروں کے در پے آزار رہنا

افتخار عارف

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(305) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Iftikhar Arif, Muqadar Ho Chuka Hai Bedar O Dewar Rehna in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Ghazal, and the type of this Nazam is Love, Sad, Social, Friendship, Bewafa, Heart Broken, Hope Urdu Poetry. Also there are 108 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.7 out of 5 stars. Read the Love, Sad, Social, Friendship, Bewafa, Heart Broken, Hope poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Iftikhar Arif.