Tajahil Arifana

تجاہل عارفانہ

جوہری کو کیا معلوم کس طرح کی مٹی میں کیسے پھول ہوتےہیں

کس طرح کے پھولوں میں

کیسی باس ہوتی ہے

جوہری کو کیا معلوم

جوہری تو ساری عمرپتھروں میں رہتا ہے

زرگروں میں رہتا ہے

جوہری کو کیا معلوم

یہ تو بس وُہی جانے

جس نے اپنی مٹی سے

اپنا ایک اک پیماں

استوار رکھا ہو

جس نے حرفِ پیماں کا اعتبار رکھا ہو

جوہری کو کیا معلوم کس طرح کی مٹی میں کیسے پھول ہوتے ہیں

کس طرح کے پھولوں میں کیسی باس ہوتی ہے

افتخار عارف

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(213) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Iftikhar Arif, Tajahil Arifana in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Nazam, and the type of this Nazam is Love, Sad, Social, Friendship, Bewafa, Heart Broken, Hope Urdu Poetry. Also there are 108 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.2 out of 5 stars. Read the Love, Sad, Social, Friendship, Bewafa, Heart Broken, Hope poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Iftikhar Arif.