Albatra

البتراء

کتنے سمُندر

کتنے صحرا

جنگل اور بارشیں

بے شمار آئینوں کا خالی پن

لمحے یا صدیاں

عبور کر کے

داخل ہوئی

میری تنہائی

تیری تنہائی میں

اے شہر گلِ سرخ !

اے عظیم خوب صورت پتّھر !

مجھے خزانے سے

کوئی سروکار نہیں

جہاں کھونٹے سے بندھا

لال گھوڑا

تئیس سو برس

کی بے خوابی میں

ایستادہ ہے

مجھے فقط تیری اداس رات کا

ایک کونا درکار ہے

کہ میری خاموشی

تیری خاموشی سے کلام کرے

میرے پاس افسوس کی کہانی ہے

جسے سن کر، قدیم چاند،

ریت کے آنسو بہائے گا

کہ تیرے ماتمی گلاب سیراب ہوں

اڑتے زمانوں کی دھجّیاں

گم شدہ عمروں کی رائگانی

تاریخ کی منافق الماریوں میں

لٹکتے اِستخواں

مجھے امانت دار پائیں گے

برباد دیواروں کی خراشوں سے

جھانکتا انہماک نہیں ٹوٹے گا

اے گلاب شہر !

میں بے زبان قصّہ گو

ایک شب بسری کا سوالی ہوں

تیرے سنگین دروازے پر

میں تجھے تیرے جیسا

اپنا دل ہدیّـہ کروں گا ،

پتّھر کا گلاب

تجھے خاموش داستان سناؤں گا

کسی بہت قدیم زمانے کی

گناہ گار خدائوں سے دور

خالص عبادت گذار اندھیرے میں

صبحِ ابد کے آخری قہقہے سے بے نیاز

افتخار بخاری

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(718) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Iftikhar Bukhari, Albatra in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Nazam, and the type of this Nazam is Love, Sad, Social, Bewafa, Heart Broken, Hope Urdu Poetry. Also there are 18 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.7 out of 5 stars. Read the Love, Sad, Social, Bewafa, Heart Broken, Hope poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Iftikhar Bukhari.