Inkar Hi Kar Dijye Iqrar Nahi Tu

انکار ہی کر دیجیے اقرار نہیں تو

انکار ہی کر دیجیے اقرار نہیں تو

الجھن ہی میں مر جائے گا بیمار نہیں تو

لگتا ہے کہ پنجرے میں ہوں دنیا میں نہیں ہوں

دو روز سے دیکھا کوئی اخبار نہیں تو

دنیا ہمیں نابود ہی کر ڈالے گی اک دن

ہم ہوں گے اگر اب بھی خبردار نہیں تو

کچھ تو رہے اسلاف کی تہذیب کی خوشبو

ٹوپی ہی لگا لیجیے دستار نہیں تو

ہم برسر پیکار ستم گر سے ہمیشہ

رکھتے ہیں قلم ہاتھ میں تلوار نہیں تو

بھائی کو ہے بھائی پہ بھروسہ تو بھلا ہے

آنگن میں بھی اٹھ جائے گی دیوار نہیں تو

بے سود ہر اک قول ہر اک شعر ہے راغبؔ

گر اس کے موافق ترا کردار نہیں تو

افتخار راغب

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(1880) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Iftikhar Raghib, Inkar Hi Kar Dijye Iqrar Nahi Tu in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Ghazal, and the type of this Nazam is Love, Sad, Social, Friendship, Bewafa, Heart Broken, Hope Urdu Poetry. Also there are 17 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.2 out of 5 stars. Read the Love, Sad, Social, Friendship, Bewafa, Heart Broken, Hope poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Iftikhar Raghib.