Do Umroon Ki Roi Dhun Kar Aaya Hon

دو عمروں کی روئی دھن کر آیا ہوں

دو عمروں کی روئی دھن کر آیا ہوں

میں پردیس سے خود کو بن کر آیا ہوں

دریا سے یاری بھی کتنی مشکل ہے

میں کشتی کے ٹکڑے چن کر آیا ہوں

تم کو کتنا شوق ہے فون پہ باتوں کا

آج بھی باس کی باتیں سن کر آیا ہوں

جانے کون چرا لیتا تھا میرا وقت

وال کلاک پہ جالا بن کر آیا ہوں

آج کی شام گزاریں گے ہم چھتری میں

بارش ہوگی خبریں سن کر آیا ہوں

دوست کو سمجھانے کی خاطر آیا تھا

ان جانے میں خود کو ٹن کر آیا ہوں

الیاس بابر اعوان

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(450) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Ilyas Babar Awan, Do Umroon Ki Roi Dhun Kar Aaya Hon in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Ghazal, and the type of this Nazam is Sad Urdu Poetry. Also there are 34 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.6 out of 5 stars. Read the Sad poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Ilyas Babar Awan.