Dil Shikasta Ki Neem Jaan Khawahisoon Ko Jeena Sikha Rahi Hai

دل شکستہ کی نیم جاں خواہشوں کو جینا سکھا رہی ہے

دل شکستہ کی نیم جاں خواہشوں کو جینا سکھا رہی ہے

نگاہ افسوں بیان اس کی بتوں سے سجدہ کرا رہی ہے

یہ پھول خوشبو یہ چاند تارے یہ گرتی بوندیں یہ ابر پارے

سب اس کی آمد کے منتظر ہیں وہ خود کو سب سے چھپا رہی ہے

یہ چاندنی میں نہایا دریا یہ محفل شب بھی خوب لیکن

میں چاند پر جا رہا ہوں مجھ کو وہ اک ضعیفہ بلا رہی ہے

جو ریگ دل پہ لکھا ہے اس کو دکھوں کا پانی مٹا نہ ڈالے

میں خواب دیکھے ہی جا رہا ہوں یہ آنکھ برسے ہی جا رہی ہے

کبھی خموشی کبھی تبسم کبھی خیالوں کی دھند میں گم

مری اداسی تو ہر قدم پر قبا بدلتی ہی جا رہی ہے

وہ خوش بیاں امتیازؔ وہ لفظ لفظ جادو چلانے والا

وہ کل ملا تھا تو کہہ رہا تھا خموشی اندر سے کھا رہی ہے

امتیاز خان

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(462) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Imtiyaz Khan, Dil Shikasta Ki Neem Jaan Khawahisoon Ko Jeena Sikha Rahi Hai in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Ghazal, and the type of this Nazam is Love, Sad, Social, Friendship, Bewafa, Heart Broken, Hope Urdu Poetry. Also there are 14 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.6 out of 5 stars. Read the Love, Sad, Social, Friendship, Bewafa, Heart Broken, Hope poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Imtiyaz Khan.