Daroon E Dil Tera Matam Hai Ku Ba Ku Nahi Hai

درون ِ دل ترا ماتم ہے، کُو بہ کُو نہیں ہے

درون ِ دل ترا ماتم ہے، کُو بہ کُو نہیں ہے

ہمارے مسلک ِ غم میں یہ ہاؤ ہُو نہیں ہے

یہ کس کو اپنے سے باہر تلاش کرتے ہیں

یہ کون ہیں کہ جنھیں اپنی جستجو نہیں ہے

میں جیت بھی جو گیا تو شکست ہوگی مجھے

مرا تو اپنے سِوا کوئی بھی عدو نہیں ہے

نہیں ہے اب کوئی زندان تک برائے قیام

رسن بھی اب پئے آرائش ِ گُلو نہیں ہے

تمام عمر کی ایذا دہی کے بعد کھُلا

میں جس کی یاد میں روتا رہا وہ تُو نہیں ہے

تُو چیز کیا ہے جو کی جائے تیری قدر میاں

کہ اب تو شہر میں غالب کی آبرو نہیں ہے

نہیں چمن کے کسی گُل میں تجھ بدن سی مہک

شراب خانے میں تجھ لب سا اک سُبو نہیں ہے

تُو خود پسند، تعلی پسند تیرا مزاج

میں خود شناس، مجھے عادت ِ غُلو نہیں ہے

ہے سرخ رنگ کی اک شے بغیرِجوش و خروش

تری رگوں میں جو بہتا ہے وہ لہُو نہیں ہے

ہر ایک اچھا سخن ور ہے داد کا حق دار

کہ بددیانتی اہلِ سخن کی خُو نہیں ہے

کہاں سے ڈھونڈ کے لاتا ہے اپنے حق میں دلیل

جناب ِ دل سا کوئی اور حیلہ جوُ نہیں ہے

نگار و جون و رسا سے ملی ہے داد ِ سخن

مجھے اب اِس سے زیادہ کی آرزو نہیں ہے

منافقت کا لبادہ اتار دے عرفان

اب آئینے کے سِوا کوئی روبرو نہیں ہے

عرفان ستار

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(472) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Irfan Sattar, Daroon E Dil Tera Matam Hai Ku Ba Ku Nahi Hai in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Ghazal, and the type of this Nazam is Love, Sad, Social, Friendship, Bewafa, Heart Broken, Hope Urdu Poetry. Also there are 92 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.2 out of 5 stars. Read the Love, Sad, Social, Friendship, Bewafa, Heart Broken, Hope poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Irfan Sattar.