Ju Hu Khud Aik Tamasha Wo Bhala Kiya Samjhe

جو ہو خود ایک تماشا وہ بھلا کیا سمجھے

جو ہو خود ایک تماشا وہ بھلا کیا سمجھے

میری حالت تو کوئی دیکھنے والا سمجھے

مجھ سے ممکن یہ نہیں ہے کہ میں کھل کر کہہ دوں

اس کے بس میں یہ نہیں ہے کہ اشارہ سمجھے

ٹھیک ہے دشت بھی ہوں، باغ بھی ہوں، دریا بھی

جس کو جیسا نظر آؤں مجھے ویسا سمجھے

لفظ پردہ ہیں، اسے کاش بتا دے کوئی

اس کو سمجھائے کہ سمجھے، مرا لہجہ سمجھے

اتنا دشوار ہوں کیا میں جو کسی پر نہ کھلوں؟

کوئی تو ہو جو مجھے میرے علاوہ سمجھے

ابھی سمجھو تو میں کیا خوب سخن تم سے کروں

بعد میرے مجھے سمجھے بھی تو پھر کیا سمجھے

عرفان ستار

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(586) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Irfan Sattar, Ju Hu Khud Aik Tamasha Wo Bhala Kiya Samjhe in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Ghazal, and the type of this Nazam is Love, Sad, Friendship, Bewafa, Heart Broken, Hope Urdu Poetry. Also there are 92 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.6 out of 5 stars. Read the Love, Sad, Friendship, Bewafa, Heart Broken, Hope poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Irfan Sattar.