Kahe Deta Hon, Go Hai To Nahi Yeh Baat Kehnay Ki

کہے دیتا ہوں، گو ہے تو نہیں یہ بات کہنے کی

کہے دیتا ہوں، گو ہے تو نہیں یہ بات کہنے کی

تری خواہش نہیں دل میں زیادہ دیر رہنے کی

بچا کر دل گزرتا جا رہا ہوں ہر تعلق سے

کہاں اس آبلے کو تاب ہے اب چوٹ سہنے کی

رگ و پے میں نہ ہنگامہ کرے تو کیا کرے آخر

اجازت جب نہیں اس رنج کو آنکھوں سے بہنے کی

بس اپنی اپنی ترجیحات، اپنی اپنی خواہش ہے

تجھے شہرت کمانے کی، مجھے اک شعر کہنے کی

جہاں کا ہوں، وہیں کی راس آئے گی فضا مجھ کو

یہ دنیا بھی بھلا کوئی جگہ ہے میرے رہنے کی؟

جو کل عرفانؔ پر گزری سنا کچھ اس کے بارے میں؟

خبر تم نے سنی طوفان میں دریا کے بہنے کی

عرفان ستار

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(467) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Irfan Sattar, Kahe Deta Hon, Go Hai To Nahi Yeh Baat Kehnay Ki in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Ghazal, and the type of this Nazam is Sad Urdu Poetry. Also there are 92 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.1 out of 5 stars. Read the Sad poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Irfan Sattar.