Yahan Takrar Saat Ke Siwa Kya Reh Gaya Hai

یہاں تکرار ساعت کے سوا کیا رہ گیا ہے

یہاں تکرار ساعت کے سوا کیا رہ گیا ہے

مسلسل ایک حالت کے سوا کیا رہ گیا ہے

تمہیں فرصت ہو دنیا سے تو ہم سے آ کے ملنا

ہمارے پاس فرصت کے سوا کیا رہ گیا ہے

بہت ممکن ہے کچھ دن میں اسے ہم ترک کر دیں

تمہارا قرب عادت کے سوا کیا رہ گیا ہے

بہت نادم کیا تھا ہم نے اک شیریں سخن کو

سو اب خود پر ندامت کے سوا کیا رہ گیا ہے

ہمارا عشق بھی اب ماند ہے جیسے کہ تم ہو

تو یہ سودا رعایت کے سوا کیا رہ گیا ہے

کہاں لے جائیں اے دل ہم تری وسعت پسندی

کہ اب دنیا میں وسعت کے سوا کیا رہ گیا ہے

سلامت ہے کوئی خواہش نہ کوئی یاد زندہ

بتا اے شام وحشت کے سوا کیا رہ گیا ہے

کسی آہٹ میں آہٹ کے سوا کچھ بھی نہیں اب

کسی صورت میں صورت کے سوا کیا رہ گیا ہے

بہت لمبا سفر طے ہو چکا ہے ذہن و دل کا

تمہارا غم علامت کے سوا کیا رہ گیا ہے

اذیت تھی مگر لذت بھی کچھ اس سے سوا تھی

اذیت ہے اذیت کے سوا کیا رہ گیا ہے

ہمارے درمیاں ساری ہی باتیں ہو چکی ہیں

سو اب ان کی وضاحت کے سوا کیا رہ گیا ہے

بجا کہتے ہو تم ہونی تو ہو کر ہی رہے گی

تو ہونے کو قیامت کے سوا کیا رہ گیا ہے

شمار و بے شماری کے تردد سے گزر کر

مآل عشق وحدت کے سوا کیا رہ گیا ہے

عرفان ستار

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(413) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Irfan Sattar, Yahan Takrar Saat Ke Siwa Kya Reh Gaya Hai in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Ghazal, and the type of this Nazam is Sad Urdu Poetry. Also there are 92 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.4 out of 5 stars. Read the Sad poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Irfan Sattar.