Pukaarta Hai Magar Dheyaan Mein Nahi Aata

پکارتا ہے مگر دھیان میں نہیں آتا

پکارتا ہے مگر دھیان میں نہیں آتا

عجیب حرف ہے امکان میں نہیں آتا

بس ایک نام ہے اپنا نشاں جو یاد نہیں

اور ایک چہرہ جو پہچان میں نہیں آتا

میں گوشہ گیر ہوں صدیوں سے اپنے حجرے میں

مصاف بیعت و پیمان میں نہیں آتا

مجھے بھی حکم نہیں شہر سے نکلنے کا

مرا حریف بھی میدان میں نہیں آتا

میں اس ہجوم میں کیوں اس قدر اکیلا ہوں

کہ جمع ہو کے بھی میزان میں نہیں آتا

مرے خدا مجھے اس آگ سے نکال کہ تو

سمجھ میں آتا ہے ایقان میں نہیں آتا

عرفان صدیقی

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(423) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Irfan Siddiqui, Pukaarta Hai Magar Dheyaan Mein Nahi Aata in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Ghazal, and the type of this Nazam is Social Urdu Poetry. Also there are 69 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.5 out of 5 stars. Read the Social poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Irfan Siddiqui.