Yeh To Sehra Hai Yahan Thandhi Howa Kab Aye Gi

یہ تو صحرا ہے یہاں ٹھنڈی ہوا کب آئے گی

یہ تو صحرا ہے یہاں ٹھنڈی ہوا کب آئے گی

یار، تم کو سانس لینے کی ادا کب آئے گی

کوچ کرنا چاہتے ہیں پھر مری بستی کے لوگ

پھر تری آواز اے کوہ ندا کب آئے گی

نسل تازہ، میں تجھے کیا تجربے اپنے بتاؤں

تیرے بڑھتے جسم پر میری قبا کب آئے گی

سر برہنہ بیبیوں کے بال چاندی ہو گئے

خیمے پھر استادہ کب ہوں گے ردا کب آئے گی

طاق میں کب تک جلے گا یہ چراغ انتظار

اس طرف شب گشت لوگوں کی صدا کب آئے گی

میری مٹی میں بھی کچھ پودے نمو آمادہ ہیں

تو مرے آنگن تک اے کالی گھٹا کب آئے گی

عرفان صدیقی

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(3308) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Irfan Siddiqui, Yeh To Sehra Hai Yahan Thandhi Howa Kab Aye Gi in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Ghazal, and the type of this Nazam is Sad Urdu Poetry. Also there are 69 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.2 out of 5 stars. Read the Sad poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Irfan Siddiqui.