Barhanghi Ka Madawa Koi Libaas Nah Tha

برہنگی کا مداوا کوئی لباس نہ تھا

برہنگی کا مداوا کوئی لباس نہ تھا

خود اپنے زہر کا تریاق میرے پاس نہ تھا

سلگ رہا ہوں خود اپنی ہی آگ میں کب سے

یہ مشغلہ تو مرے درد کی اساس نہ تھا

تری نوازش پیہم کے نقش دل میں رہے

میں بے خبر سہی پر ایسا نا سپاس نہ تھا

ہر ایک شعر تھا میرا مرے خیال کا عکس

کوئی کتاب نہ تھی کوئی اقتباس نہ تھا

بکھر گئے تھے سو خود کو سمیٹ بھی لیتے

کہ اس یقین میں شامل مرا قیاس نہ تھا

اسرار زیدی

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(279) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Israr Zaidi, Barhanghi Ka Madawa Koi Libaas Nah Tha in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Ghazal, and the type of this Nazam is Sad Urdu Poetry. Also there are 36 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.1 out of 5 stars. Read the Sad poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Israr Zaidi.