Dekhe Bhaale Raste Thay

دیکھے بھالے رستے تھے

دیکھے بھالے رستے تھے

پھر بھی لوگ بھٹکتے تھے

دریا صحرا اور سراب

منظر سارے پھیکے تھے

اک سنجوگ کا قصہ تھا

کتنے بندھن ٹوٹے تھے

دل تو اس کا اجلا تھا

لیکن کپڑے میلے تھے

نظریں دھندلی دھندلی تھیں

چہرے نیلے پیلے تھے

گلیاں کوچے سب جل تھل

ٹوٹ کے بادل برسے تھے

کتنے چاند گہن میں تھے

کتنے تارے ٹوٹے تھے

وقت کے بہتے دریا میں

کتنے سورج ڈوبے تھے

سارا جسم دہک اٹھا

شعلے تو پھر شعلے تھے

اسرار زیدی

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(509) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Israr Zaidi, Dekhe Bhaale Raste Thay in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Ghazal, and the type of this Nazam is Social Urdu Poetry. Also there are 36 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.7 out of 5 stars. Read the Social poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Israr Zaidi.