Pehlay To Nah Thi Itni Tab O Taab Ghazal Main

پہلے تو نہ تھی اتنی تب و تاب غزل میں

پہلے تو نہ تھی اتنی تب و تاب غزل میں

کام آ گئی غم خوارئ‌ احباب غزل میں

دل پر سے ترے غم کا ابھی ابر چھٹا ہے

چمکا ہے تری یاد کا مہتاب غزل میں

یاروں کو کسی طور بھی نشہ نہیں ہوتا

جب تک کہ نہ شامل ہو مئے ناب غزل میں

جس سے خلش درد کا آغاز ہوا ہے

رقصاں ہے وہی پیکر سیماب غزل میں

ہر مصرعۂ تر تختۂ‌ گلزار کی صورت

رنگوں کی ہے اک وادئ شاداب غزل میں

گو درد کے اظہار کی عادت تو نہیں تھی

پینا ہی پڑا ہم کو یہ زہر آب غزل میں

اصناف سخن اور بھی اے دوست بہت ہیں

رنگیں ہے مری زیست کا ہر باب غزل میں

اسرار زیدی

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(324) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Israr Zaidi, Pehlay To Nah Thi Itni Tab O Taab Ghazal Main in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Ghazal, and the type of this Nazam is Social Urdu Poetry. Also there are 36 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.6 out of 5 stars. Read the Social poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Israr Zaidi.