Zamee Hogi Kisi Qaatil Ka Daman Hum Nah Kehte Thay

زمیں ہوگی کسی قاتل کا داماں ہم نہ کہتے تھے

زمیں ہوگی کسی قاتل کا داماں ہم نہ کہتے تھے

اکارت جائے گا خون شہیداں ہم نہ کہتے تھے

علاج چاک پیراہن ہوا تو اس طرح ہوگا

سیا جائے گا کانٹوں سے گریباں ہم نہ کہتے تھے

ترانے کچھ دئیے لفظوں میں خود کو قید کر لیں گے

عجب انداز سے پھیلے گا زنداں ہم نہ کہتے تھے

کوئی اتنا نہ ہوگا لاش بھی لے جا کے دفنا دے

انہیں سڑکوں پہ مر جائے گا انساں ہم نہ کہتے تھے

نظر لپٹی ہے شعلوں میں لہو تپتا ہے آنکھوں میں

اٹھا ہی چاہتا ہے کوئی طوفاں ہم نہ کہتے تھے

چھلکتے جام میں بھیگی ہوئی آنکھیں اتر آئیں

ستائے گی کسی دن یاد یاراں ہم نہ کہتے تھے

نئی تہذیب کیسے لکھنؤ کو راس آئے گی

اجڑ جائے گا یہ شہر غزالاں ہم نہ کہتے تھے

جاں نثاراختر

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(572) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Jaan Nisar Akhtar, Zamee Hogi Kisi Qaatil Ka Daman Hum Nah Kehte Thay in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Ghazal, and the type of this Nazam is Sad Urdu Poetry. Also there are 71 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.1 out of 5 stars. Read the Sad poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Jaan Nisar Akhtar.