Jab Kafan Darvesh Ka Turbat Main Kala Hua

جب کفَن درویش کا تُربَت میں کالا ہو گیا

جب کفَن درویش کا تُربَت میں کالا ہو گیا

جھونپڑی میں آگ بھڑکی اور اُجالا ہو گیا

ارجمندی کیسی غار ِ ثور کی قسمت ہوئی

برگُزیدَہ کس قدَر مکڑی کا جالا ہو گیا

جانے کس برباد کی میں نے صدا پامال کی

دینے والا ہاتھ میرا، لینے والا ہو گیا

لاد کر بوڑھے مسافر پیٹھ پر ہم سب چلے

اور مہاجر پائوں کا ہر ایک چھالا ہو گیا

میں نے بس پہلا دِیا روشن کیا تھا شہر میں

اور پھر ہر اِک دِیا میرا حوالہ ہو گیا

لے کے واصف بے چراغوں کے مزاروں سے دعا

اپنے ہر اِک وصف میں سب سے نرالا ہو گیا

جبار واصف

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(1904) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Jabbar Wasif, Jab Kafan Darvesh Ka Turbat Main Kala Hua in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Ghazal, and the type of this Nazam is Sufi, Friendship, Hope Urdu Poetry. Also there are 30 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.2 out of 5 stars. Read the Sufi, Friendship, Hope poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Jabbar Wasif.