Parshoor Talatum Ka Madawa Koi Ahat

پر شور تلاطم کا مداوا کوئی آہٹ

پر شور تلاطم کا مداوا کوئی آہٹ

سنگین فضا میں تھی دلاسا کوئی آہٹ

بے درد ہواؤں نے ہراساں تو کیا تھا

تھی ساتھ مگر ان کے شناسا کوئی آہٹ

جب کالی گھٹا قہر کا سامان بنی تھی

دے کر گئی بجلی کا اجالا کوئی آہٹ

گوشے میں تصور جہاں بیمار پڑا تھا

کرتی تھی محبت سے اشارہ کوئی آہٹ

خاموش خیالوں کے قفس میں تو پڑا رہ

جاگے گی نہیں در پہ دوبارہ کوئی آہٹ

سیلاب کے نرغے میں گھری جب سے تمنا

اک سپنا دکھاتی ہے سہانا کوئی آہٹ

کرتی ہے کبھی غیظ کی بانہوں کو پکڑ کر

بے چین سمندر میں تماشا کوئی آہٹ

اک یاد کا آنچل جو اڑا تیز ہوا میں

دینے لگی ہمدرد بلاوا کوئی آہٹ

رحمت بھری آنکھوں سے ذرا دیکھنا جعفرؔ

طوفان میں ڈھونڈے ہے سہارا کوئی آہٹ

جعفر ساہنی

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(552) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Jafar Sahni, Parshoor Talatum Ka Madawa Koi Ahat in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Ghazal, and the type of this Nazam is Love, Sad, Social, Friendship, Bewafa, Heart Broken, Hope Urdu Poetry. Also there are 38 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 5 out of 5 stars. Read the Love, Sad, Social, Friendship, Bewafa, Heart Broken, Hope poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Jafar Sahni.