Hawa Main Teer Rahe Hain Sahabb Mitti K

ہوا میں تیر رہے ہیں سحاب مٹی کے

ہوا میں تیر رہے ہیں سحاب مٹی کے

زمیں پہ آئیں گے اک دن عذاب مٹی کے

مجھے تو اس سے کئی آدمی بنانے تھے

پرند بھی نہ بنے دستیاب مٹی کے

فلک سے نور کی صورت سوال اترے تھے

دیے زمین نے لیکن جواب مٹی کے

یہ کس جہان میں مجھ کو گمان لے آیا

ابھر رہے ہیں یہاں آفتاب مٹی کے

پھر ایک روز اسے چاک پر اتارا گیا

پھر اس کے بعد ہوئے دن خراب مٹی کے

کیے گئے تھے ہزاروں ہی تجربات مگر

بدن رہے ہیں فقط کامیاب مٹی کے

یہ اس کے نقش کف پا ہیں اور لگتے ہیں

زمیں پہ جیسے کھلے ہوں گلاب مٹی کے

کسی کے واسطے ساحر چراغ تھے لیکن

ہوا کے ہاتھ پہ رکھے تھے خواب مٹی کے

جہانزیب ساحر

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(1072) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Jahanzeb Sahir, Hawa Main Teer Rahe Hain Sahabb Mitti K in Urdu. This famous Urdu Shayari is a , and the type of this Nazam is Urdu Poetry. Also there are 22 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.3 out of 5 stars. Read the poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Jahanzeb Sahir.