Bikhar Gaya Hai Jo Moti Prone Wala Tha

بکھر گیا ہے جو موتی پرونے والا تھا

بکھر گیا ہے جو موتی پرونے والا تھا

وہ ہو رہا ہے یہاں جو نہ ہونے والا تھا

اور اب یہ چاہتا ہوں کوئی غم بٹائے مرا

میں اپنی مٹی کبھی آپ ڈھونے والا تھا

ترے نہ آنے سے دل بھی نہیں دکھا شاید

وگرنہ کیا میں سر شام سونے والا تھا

ملا نہ تھا پہ بچھڑنے کا غم نہ تھا مجھ کو

جلا نہیں تھا مگر راکھ ہونے والا تھا

ہزار طرح کے تھے رنج پچھلے موسم میں

پر اتنا تھا کہ کوئی ساتھ رونے والا تھا

جمال احسانی

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(812) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Jamal Ehsani, Bikhar Gaya Hai Jo Moti Prone Wala Tha in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Ghazal, and the type of this Nazam is Sad, Social Urdu Poetry. Also there are 52 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.5 out of 5 stars. Read the Sad, Social poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Jamal Ehsani.