Hain Jis Shajar Ke Tale Kab Usse Khabar Ki Hai, Urdu Ghazal By Jamal Ehsani

Hain Jis Shajar Ke Tale Kab Usse Khabar Ki Hai is a famous Urdu Ghazal written by a famous poet, Jamal Ehsani. Hain Jis Shajar Ke Tale Kab Usse Khabar Ki Hai comes under the Love, Sad category of Urdu Ghazal. You can read Hain Jis Shajar Ke Tale Kab Usse Khabar Ki Hai on this page of UrduPoint.

ہیں جس شجر کے تلے کب اُسے خبر کی ہے

جمال احسانی

ہیں جس شجر کے تلے کب اُسے خبر کی ہے

کہ ہم پہ چھاؤں کسی دوسرے شجر کی ہے

یہ لمحہ رائگاں گزرے تو ساری عمر کا روگ

نہ رائگاں ہو تو رُسوائی عمر بھر کی ہے

غبار یاد ہے جس رہ گزر کا ہے لیکن‘

تھکن کا علم نہیں ہے کہ کس سفر کی ہے

ہزار لَوٹنا چاہیں ہم اس کے کُوچے سے

ہمیں خبر ہے جو اوقات بال و پَر کی ہے

اَب اس سے کیجئے کیا شکوہ ہائے کم نِگہی

بہت دنوں میں تو اس نے اِدھر نظر کی ہے

یہ لوگ بھی مِرے دیوار و دَر بھی میرے ہیں

مگر فضا یہ کسی اور ہی کے گھر کی ہے

غلط لگایا تھا طاقت کا اپنی اندازہ

پھر اور اِک غلطی جنگ چھیڑ کر کی ہے

یہاں سے دُور بہت ہے جو سوچنے میں جمال

زمین پاؤں کے نیچے اُسی نگر کی ہے

جمال احسانی

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(2170) ووٹ وصول ہوئے

You can read Hain Jis Shajar Ke Tale Kab Usse Khabar Ki Hai written by Jamal Ehsani at UrduPoint. Hain Jis Shajar Ke Tale Kab Usse Khabar Ki Hai is one of the masterpieces written by Jamal Ehsani. You can also find the complete poetry collection of Jamal Ehsani by clicking on the button 'Read Complete Poetry Collection of Jamal Ehsani' above.

Hain Jis Shajar Ke Tale Kab Usse Khabar Ki Hai is a widely read Urdu Ghazal. If you like Hain Jis Shajar Ke Tale Kab Usse Khabar Ki Hai, you will also like to read other famous Urdu Ghazal.

You can also read Love Poetry, If you want to read more poems. We hope you will like the vast collection of poetry at UrduPoint; remember to share it with others.