Sukhan Se Chahe Na Rakhna Mutabqat Koi, Urdu Ghazal By Jamal Ehsani

Sukhan Se Chahe Na Rakhna Mutabqat Koi is a famous Urdu Ghazal written by a famous poet, Jamal Ehsani. Sukhan Se Chahe Na Rakhna Mutabqat Koi comes under the Sad category of Urdu Ghazal. You can read Sukhan Se Chahe Na Rakhna Mutabqat Koi on this page of UrduPoint.

سخن سے چاہے نہ رکھنا مطابقت کوئی

جمال احسانی

سخن سے چاہے نہ رکھنا مطابقت کوئی

وہ آنکھ چُپ ہو تو پھر بولنا بھی مَت کوئی

اِس آب و خاک سے اِک ہاتھ کے بنائے ہوئے

وہ ہم ہیں جن میں نہیں ہے مشابہت کوئی

بچھڑ نہ جائیں دوبارہ جو مِل کے بیٹھے ہیں

چلا نہ دے کہیں پھر بادِ بے جہت کوئی

میں کیسے فرق کروں دوست اور دشمن میں

کہ مجھ سے کرتا ہے مجھ میں منافقت کوئی

عجب تھی مجھ سے مِرے رنج کھینچنے کی اَدا

سو مجھ کو بخش گیا غم کی سلطنت کوئی

رہے گی اب یہ زمیں عمر بھر مدار بدر

کہ اب نہ آئے گا شاید فلک صفت کوئی

نہ خاکِ دشتِ تمنا ہوئے‘ نہ رونقِ شہر

پڑی تھی پاؤں میں زنجیرِ مصلحت کوئی

جمال احسانی

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(379) ووٹ وصول ہوئے

You can read Sukhan Se Chahe Na Rakhna Mutabqat Koi written by Jamal Ehsani at UrduPoint. Sukhan Se Chahe Na Rakhna Mutabqat Koi is one of the masterpieces written by Jamal Ehsani. You can also find the complete poetry collection of Jamal Ehsani by clicking on the button 'Read Complete Poetry Collection of Jamal Ehsani' above.

Sukhan Se Chahe Na Rakhna Mutabqat Koi is a widely read Urdu Ghazal. If you like Sukhan Se Chahe Na Rakhna Mutabqat Koi, you will also like to read other famous Urdu Ghazal.

You can also read Sad Poetry, If you want to read more poems. We hope you will like the vast collection of poetry at UrduPoint; remember to share it with others.