Dar Biyan Junbash E Dast Sultan

در بیان جنبش ِ دست ِ سلطان

وہ حرف ِ ابتدا

اب انتہا کی رہگزر میں ہے

ذرا ٹھہرو

ہمیں بھی ہے یہ اندازہ

افق ہے آسماں کے تخت کی چوکی

زمیں محکوم رقاصہ!

زماں اپنا

جہاں اپنا

نہ زاد ِ کارواں اپنا

یہاں

تحلیل ہونے کے لئےہے

ہر نشاں اپنا

سبھی فانی ہیں

لافانی

فقط اک دست ِ سلطانی!

اُسی پر ہے

نظر سب کی

اُسی کی آخری جنبش

صدائے ناگہاں

ان چاہی ،انجانی

قیامت کی امانت ہے

شہادت ہے زمانوں پر

وہی انمٹ صداقت ہے!

زمیں کو رقص کرنا ہے

کہ رقص ِ ارض ہے جب تک

ہماری سانس جاری ہے

یہ جشن ِ خواب ہے جب تک

مئے عشرت ہماری ہے!!!!!!!!!

جمیل الرحمان

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(250) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Jameel Ur Rahman, Dar Biyan Junbash E Dast Sultan in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Nazam, and the type of this Nazam is Social, Hope Urdu Poetry. Also there are 68 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.3 out of 5 stars. Read the Social, Hope poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Jameel Ur Rahman.