Mitti Main Mill Rahe Hain Geher Khaak Chaniye

مٹی میں مل رہے ہیں گہرخاک چھانیے

مٹی میں مل رہے ہیں گہرخاک چھانیے

اب ہے یہی کمال ہنر خاک چھانیے

کیا رنگ تھے گھٹا نے جنہیں خواب کر دیا

قوس قزح کے ساتھ کدھر خاک چھانیے

اب کون سا افق ہے طلوع و غروب کا

اب کس یقیں پہ شام و سحر خاک چھانیے

ہم نے یہ کب کہا کہ نہیں باغ آپ کا

ہاں کہہ رہی ہے شاخ ِثمر خاک چھانیے

آئینہ بند شہر میں اترا ہے آفتاب

تو۔خیرگی میں اہل ِنظر خاک چھانیے

کارِ جنوں میں کوئی کمی ہے ابھی جمیل

ہوتی رہے گی عمر بسر خاک چھانیے

جمیل الرحمان

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(303) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Jameel Ur Rahman, Mitti Main Mill Rahe Hain Geher Khaak Chaniye in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Ghazal, and the type of this Nazam is Love, Sad, Friendship, Bewafa, Heart Broken, Hope Urdu Poetry. Also there are 68 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 5 out of 5 stars. Read the Love, Sad, Friendship, Bewafa, Heart Broken, Hope poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Jameel Ur Rahman.