Sarapa Aag Hai Ehtemam Wasal Karti Hai

سراپا آگ ہے اور اہتمام وصل کرتی ہے

سراپا آگ ہے اور اہتمام وصل کرتی ہے

وہ بجھتی ہے تو میری راکھ بستر پر بکھرتی ہے

بچھا کر میں کہیں اپنی سماعت بیٹھ جاتا ہوں

کوئی آواز جب پاتال سے دل کے ابھرتی ہے

بہت پانی ہے اُس دریا میں جس کے سرد دھارے سے

کوئی موجِ خسارہ روز ساحل پر اترتی ہے

لباس ِ ہجر پہنے گھومتی ہے گھر میں جو خوشبو

برہنہ بام و در کو دیکھ کر کیا یاد کرتی ہے

جمیل اب موسموں کی سیڑھیاں چڑھتی نہیں بارش

اُسے جو کر گزرنا ہواچانک کر گزرتی ہے

جمیل الرحمان

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(416) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Jameel Ur Rahman, Sarapa Aag Hai Ehtemam Wasal Karti Hai in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Ghazal, and the type of this Nazam is Love, Sad, Social, Friendship, Bewafa, Heart Broken, Hope Urdu Poetry. Also there are 68 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.9 out of 5 stars. Read the Love, Sad, Social, Friendship, Bewafa, Heart Broken, Hope poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Jameel Ur Rahman.