Hijrat Thi Muqadar Main Phir Kaise Thehar Jata

ہجرت تھی مقدر میں پھر کیسے ٹھہر جاتا

ہجرت تھی مقدر میں پھر کیسے ٹھہر جاتا

گھر ہوتا اگر میرا لازم تھا کہ گھر جاتا

سمٹا تو مِرا ہونا یاروں کو گراں گزرا

اس سے تو یہ بہتر تھا چپ چاپ بکھر جاتا

اک لمس کی لو میرے اطراف میں تھی روشن

ورنہ تو میں خود سے بھی اس حال میں ڈر جاتا

تاریخ کے کانوں میں اک شخص نے بتلایا

میں مر کے ہُوا زندہ گر جیتا تو مر جاتا

اک قرب کی ساعت کو کرنا تھا امر میں نے

گر میں نہ گزرتا تو پھروقت گزر جاتا

درپیش مسائل تھے مجھ کو بھی انا والے

ورنہ میں اُدھر جاتا وہ شخص جدھر جاتا

اک پل بھی نہیں ایسا حالات کے دامن میں

جو اشک ندامت کے اس آنکھ میں بھر جاتا

کچھ بھی تو نہ کر پایا جز تیری محبت میں

گر یہ نہ قمر کرتا بے نام ہی مر جاتا

جمیل قمر

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(540) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Jamil Qamar, Hijrat Thi Muqadar Main Phir Kaise Thehar Jata in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Ghazal, and the type of this Nazam is Love, Sad, Friendship, Bewafa, Heart Broken, Hope Urdu Poetry. Also there are 68 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.1 out of 5 stars. Read the Love, Sad, Friendship, Bewafa, Heart Broken, Hope poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Jamil Qamar.