Udhora Aks Or Aaina

ادھورا عکس اور آئینہ

اس نے کہا تھا

میں روزانہ تم پر

ایک نظم لکھوں گی

سینے میں سوکھا ہوا پیڑ ہرا بھرا رہے گا

گونگے لفظ بول آٹھیں گے

بھٹکتی ہوئی ہوا رقص کرتی ہوئی

خوشبو بکھیرتی

آنگن کو سجائے گی

بنجر آنکھ میں تھکن کا چشمہ

جو صدیوں سے ابل رہا ہے

گوہر اگلے گا

انا کے قفس سے ہم دونوں

باہر نکل کے سوچیں گے

یوں محبت کا الماس

ہماری دسترس میں ہو گا

ہمارے سر سے بلائیں ٹل جائیں گی

کسے معلوم تھا

کہ حسرت و یاس میں

گوندھے ہوئے شب و روز

سپردگی کے خبط میں

انہونی سی مضطرب دھن پہ

نا معلوم گیت چہچہانے لگیں گے

منظر دھندلا نے لگیں گے

در و دیوار سہم کر سمٹ جائیں گے

خاک آلودہ قندیل ہاتھ میں تھامے

پتھر کی سل پہ

ہم دونوں پتھر ہو جائیں گے

جمیل قمر

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(429) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Jamil Qamar, Udhora Aks Or Aaina in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Nazam, and the type of this Nazam is Love, Sad, Friendship, Bewafa, Heart Broken, Hope Urdu Poetry. Also there are 68 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.9 out of 5 stars. Read the Love, Sad, Friendship, Bewafa, Heart Broken, Hope poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Jamil Qamar.