Bad Dili Main Be Qarari Ko Qarar Aaya To Kya

بد دلی میں بے قراری کو قرار آیا تو کیا

بد دلی میں بے قراری کو قرار آیا تو کیا

پا پیادہ ہو کے کوئی شہسوار آیا تو کیا

زندگی کی دھوپ میں مرجھا گیا میرا شباب

اب بہار آئی تو کیا ابر بہار آیا تو کیا

میرے تیور بجھ گئے میری نگاہیں جل گئی

اب کوئی آئینہ رو آئینہ دار آیا تو کیا

اب کہ جب جانانہ تم کو ہے سبھی پر اعتبار

اب تمہیں جانانہ پہ جب اعتبار آیا تو کیا

اب مجھے خود اپنی باہوں پر نہیں ہے اختیار

ہاتھ پھیلائے کوئی بے اختیار آیا تو کیا

وہ تو اب بھی خواب ہے بے دار بینائی کا خواب

زندگی میں خواب میں اس کے گزار آیا تو کیا

ہم یہاں ہیں بے گناہ سو ہم میں سے جونؔ ایلیا

کوئی جیت آیا یہاں اور کوئی ہار آیا تو کیا

جون ایلیا

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(1432) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Jaun Elia, Bad Dili Main Be Qarari Ko Qarar Aaya To Kya in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Ghazal, and the type of this Nazam is Social Urdu Poetry. Also there are 195 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.4 out of 5 stars. Read the Social poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Jaun Elia.