Koi Dam Bhi Main Kab Andar Raha Hon

کوئی دم بھی میں کب اندر رہا ہوں

کوئی دم بھی میں کب اندر رہا ہوں

لیے ہیں سانس اور باہر رہا ہوں

دھوئیں میں سانس ہیں سانسوں میں پل ہیں

میں روشندان تک بس مر رہا ہوں

فنا ہر دم مجھے گنتی رہی ہے

میں اک دم کا تھا اور دن بھر رہا ہوں

ذرا اک سانس روکا تو لگا یوں

کہ اتنی دیر اپنے گھر رہا ہوں

بجز اپنے میسر ہے مجھے کیا

سو خود سے اپنی جیبیں بھر رہا ہوں

ہمیشہ زخم پہنچے ہیں مجھی کو

ہمیشہ میں پس لشکر رہا ہوں

لٹا دے نیند کے بستر پہ اے رات

میں دن بھر اپنی پلکوں پر رہا ہوں

جون ایلیا

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(820) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Jaun Elia, Koi Dam Bhi Main Kab Andar Raha Hon in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Ghazal, and the type of this Nazam is Social Urdu Poetry. Also there are 195 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.5 out of 5 stars. Read the Social poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Jaun Elia.