Main Na Thahrun Na Jaan Tu Thahrey

میں نہ ٹھہروں نہ جان تو ٹھہرے

میں نہ ٹھہروں نہ جان تو ٹھہرے

کون لمحوں کے روبرو ٹھہرے

نہ گزرنے پہ زندگی گزری

نہ ٹھہرنے پہ چار سو ٹھہرے

ہے مری بزم بے دلی بھی عجیب

دل پہ رکھوں جہاں سبو ٹھہرے

میں یہاں مدتوں میں آیا ہوں

ایک ہنگامہ کو بہ کو ٹھہرے

محفل رخصت ہمیشہ ہے

آؤ اک حشر ہا و ہو ٹھہرے

اک توجہ عجب ہے سمتوں میں

کہ نہ بولوں تو گفتگو ٹھہرے

کج ادا تھی بہت امید مگر

ہم بھی جونؔ ایک حیلہ جو ٹھہرے

ایک چاک برہنگی ہے وجود

پیرہن ہو تو بے رفو ٹھہرے

میں جو ہوں کیا نہیں ہوں میں خود بھی

خود سے بات آج دو بدو ٹھہرے

باغ جاں سے ملا نہ کوئی ثمر

جونؔ ہم تو نمو نمو ٹھہرے

جون ایلیا

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(1052) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Jaun Elia, Main Na Thahrun Na Jaan Tu Thahrey in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Ghazal, and the type of this Nazam is Social Urdu Poetry. Also there are 195 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.1 out of 5 stars. Read the Social poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Jaun Elia.