Nasha Shoq Rang Main Tujhsey Judai Ki Gai

نشۂ شوق رنگ میں تجھ سے جدائی کی گئی

نشۂ شوق رنگ میں تجھ سے جدائی کی گئی

ایک لکیر خون کی بیچ میں کھینچ دی گئی

تھی جو کبھی سر سخن میری وہ خامشی گئی

ہائے کہن‌ سنن کی بات ہائے وہ بات ہی گئی

شوق کی ایک عمر میں کیسے بدل سکے گا دل

نبض جنون ہی تو تھی شہر میں ڈوبتی گئی

اس کی گلی سے اٹھ کے میں آن پڑا تھا اپنے گھر

ایک گلی کی بات تھی اور گلی گلی گئی

اس کی امید ناز کا مجھ سے یہ مان تھا کہ آپ

عمر گزار دیجیے عمر گزار دی گئی

دور بہ دور دل بہ دل درد بہ درد دم بہ دم

تیرے یہاں رعایت حال نہیں رکھی گئی

جونؔ جنوب زرد کے خاک بسر یہ دکھ اٹھا

موج شمال سبز جاں آئی تھی اور چلی گئی

کیا وہ گماں نہیں رہا ہاں وہ گماں نہیں رہا

کیا وہ امید بھی گئی ہاں وہ امید بھی گئی

جون ایلیا

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(1331) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Jaun Elia, Nasha Shoq Rang Main Tujhsey Judai Ki Gai in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Ghazal, and the type of this Nazam is Sad Urdu Poetry. Also there are 195 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.5 out of 5 stars. Read the Sad poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Jaun Elia.