Bar E Zubaan Thi Zehen Pey Mere Wabal Thi

بارِ زباں تھی ذہن پہ میرے وبال تھی

بارِ زباں تھی ذہن پہ میرے وبال تھی

اک داستاں کہ مجھ کو سنانی محال تھی

میں بھی تو ایک نور میں ڈھلتا چلا گیا

وہ بھی شبِ وصال سراپا وصال تھی

کس کس کو میں نے ڈال دیا امتحان میں

میرا نہیں جواب وہ میرا سوال تھی

پیچیدگی میں تھی کوئی غالب کی وہ غزل

وہ سہلِ ممتنع کی اک اعلیٰ مثال تھی

اُس کے سخن کے سحرمیں اب تک ہوں مبتلا

سادہ سی گفتگو تھی مگر کیا کمال تھی

چھوٹے سے اک دیے کی وہ سچ مچ سی ایک لو

سورج کی اُس کے سامنے کوئی مجال تھی

اخترؔ وہ خوشبووں کی ردائیں تنی ہوئیں

جو جھک گئی تھی سامنے پھولوں کی ڈال تھی

جنید اختر

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(490) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Junaid Akhter, Bar E Zubaan Thi Zehen Pey Mere Wabal Thi in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Ghazal, and the type of this Nazam is Love, Sad, Friendship, Bewafa, Heart Broken, Hope Urdu Poetry. Also there are 41 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.9 out of 5 stars. Read the Love, Sad, Friendship, Bewafa, Heart Broken, Hope poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Junaid Akhter.