Harza Sarai Bain E Sukhaan Or Bhar Gayi

ہرزہ سرائی بینِ سخن اور بڑھ گئی

ہرزہ سرائی بینِ سخن اور بڑھ گئی

سستا ہوا تو قیمتِ فن اور بڑھ گئی

جانا کہ دوست ہی تھا مسیحیٰ کے روپ میں

دل پر رکھا جو ہاتھ جلن اور بڑھ گئی

جانے کہاں سے آئی تھی کل رات کو ہوا

کھڑکی کھلی تو گھر میں گھٹن اور بڑھ گئی

پہلے ہی ہاتھ پاؤں حسیں کم نہ تھے مگر

رنگِ حنا سے ان کی پھبن اور بڑھ گئی

یومِ جزا میں فتنہء محشر کی خیر ہو

پہلے ہی جو تھی سرو بدن، اور بڑھ گئی

صحرا کو دیکھنے کا تو بچپن سے شوق تھا

دل کو لگا لیا تو لگن اور بڑھ گئی

وہ تو مرے منانے سے اخترؔ بگڑ گئے

ماتھے پہ ایک گہری شکن اور بڑھ گئی

جنید اختر

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(486) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Junaid Akhter, Harza Sarai Bain E Sukhaan Or Bhar Gayi in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Ghazal, and the type of this Nazam is Love, Sad, Social, Friendship, Bewafa, Heart Broken, Hope Urdu Poetry. Also there are 41 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.4 out of 5 stars. Read the Love, Sad, Social, Friendship, Bewafa, Heart Broken, Hope poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Junaid Akhter.