Jiss Qoum Ko Bhi Chahne Wala Nahi Milla

جس قوم کو بھی چاہنے والا نہیں ملا

جس قوم کو بھی چاہنے والا نہیں ملا

تاریخ میں پھر اس کا حوالہ نہیں ملا

غیرت کی بات کیا کریں ہم اس غلام سے

عزت سے جس کو ایک نوالہ نہیں ملا

غیروں کے اس دیار میں مرضی سے آئے ہیں

ہم کو تو کوئی دیس نکالا نہیں ملا

پھر ہم گئے ہیں مانگنے سورج سے روشنی

گھر کے چراغ سے جو اُجالا نہیں ملا

اک بار گر کے دیکھ لے پہلے سُرور سے

ساقی کا ہر کسی کو سنبھالا نہیں ملا

اخترؔ چمک پہ تھوڑی سی ہم خوش بہت ہوے

کچھ غم نہیں جو چاند کا ہالہ نہیں ملا

جنید اختر

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(1428) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Junaid Akhter, Jiss Qoum Ko Bhi Chahne Wala Nahi Milla in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Ghazal, and the type of this Nazam is Love, Sad, Social, Heart Broken, Hope Urdu Poetry. Also there are 41 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.1 out of 5 stars. Read the Love, Sad, Social, Heart Broken, Hope poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Junaid Akhter.