Kiya Hua Dini Main Ju Kantoon Pey Guzar Hota Hai

کیا ہوا دن میں جو کانٹوں پہ گذر ہوتا ہے

کیا ہوا دن میں جو کانٹوں پہ گذر ہوتا ہے

رات کا وقت ستاروں میں بسر ہوتا ہے

ایک ہوتی ہے خبر وہ جو نظر آتی ہے

واقعہ ایک یہاں زیرِ خبر ہوتا ہے

سر پہ دشنام رکھو بھوک کمر پر رکھ لو

اب شریفوں کا یہی رختِ سفر ہوتا ہے

گھر میں آجائیں تو رہ جائے گا صحرا ہو کر

ہم جو صحرا میں چلے جائیں تو گھر ہوتا ہے

جھوٹ کیوں بولوں کہ وہ درد مرے سینے میں

میں تو کہتا ہوں نہیں ہوتا مگر ہوتا ہے

اُس کو اچھا نہ کہو تم تو بُرا بھی نہ کہو

شعر شاعر کا میاں لختِ جگر ہوتا ہے

ایک رستہ ہے محبت کا وہ رستہ اخترؔ

جس میں خطرے نہیں ہوتے تو خطر ہوتا ہے

جنید اختر

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(413) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Junaid Akhter, Kiya Hua Dini Main Ju Kantoon Pey Guzar Hota Hai in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Ghazal, and the type of this Nazam is Love, Sad, Social, Friendship, Heart Broken, Birthday, Hope Urdu Poetry. Also there are 38 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.8 out of 5 stars. Read the Love, Sad, Social, Friendship, Heart Broken, Birthday, Hope poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Junaid Akhter.