Nafsiyati Mareez

نفسیاتی مریض

میر تو نہیں ہوں میں

جانے پھر بھی ایسا کیوں

روز روز ہوتا ہے

رات کے سمندر میں

چاند جو کہ مچھلی ہے

موتیاں اگلتا ہے

اور ایک موتی سے

جل پری نکلتی ہے

اور مجھ سے کہتی ہے

کیوں اداس رہتے ہوں

''نیند کیوں نہیں آتی''

کون یاد آتا ہے

کس کا غم ستاتا ہے

الفتوں کے مارے ہو

چاہتوں کے پیاسے ہو

رات اک سمندر ہے

جس کی موج ظلمت میں

عاشقوں کے نالوں کا

ان کہے سوالوں کا

زہر خوب ہوتا ہے

سیر ہو کے پی لینا

پھر گلے لگا لینا

موت کی دلہن کو تم

دفعتاً یہ ہوتا ہے

آرزو کی چوکھٹ پر

دل کے ٹوٹ جانے سے

درد چیخ اٹھتا ہے

عشق! تیری توبہ ہے

خالد مبشر

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(859) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Khalid Mubashir, Nafsiyati Mareez in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Nazam, and the type of this Nazam is Love, Sad, Social, Friendship, Bewafa, Heart Broken, Hope Urdu Poetry. Also there are 17 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.7 out of 5 stars. Read the Love, Sad, Social, Friendship, Bewafa, Heart Broken, Hope poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Khalid Mubashir.