Hakaytoon Se Fasanoon Se Reet Urti Hai

حکایتوں سے فسانوں سے ریت اڑتی ہے

حکایتوں سے فسانوں سے ریت اڑتی ہے

یہاں قدیم زمانوں سے ریت اڑتی ہے

نشیب جاں سے امڈتے ہیں تازہ رو دریا

بلند بام مکانوں سے ریت اڑتی ہے

لپک الگ ہے چمک اور ہے للک ہے جدا

یہ کیسی کیسی اٹھانوں سے ریت اڑتی ہے

یہاں کتابوں سے جھڑتی ہیں بھربھری صدیاں

اور ایک شیلف کے خانوں سے ریت اڑتی ہے

بہ نجد خاطر مجنوں ورائے شوق و جنوں

اڑے تو کتنے بہانوں سے ریت اڑتی ہے

ہماری نقش نمائی کو چاٹنے کے لیے

ترے تمام جہانوں سے ریت اڑتی ہے

یہیں کہیں تھے وہ لہریں اچھالنے والے

ہمارے دل میں زمانوں سے ریت اڑتی ہے

خمار میرزادہ

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(468) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Khumar Mirzada, Hakaytoon Se Fasanoon Se Reet Urti Hai in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Ghazal, and the type of this Nazam is Love, Sad, Social, Friendship, Bewafa, Heart Broken, Hope Urdu Poetry. Also there are 17 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.5 out of 5 stars. Read the Love, Sad, Social, Friendship, Bewafa, Heart Broken, Hope poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Khumar Mirzada.