Tasawur Se Kisi Ke Mein Ne Ki Hai Guftagu Barson

تصور سے کسی کے میں نے کی ہے گفتگو برسوں

تصور سے کسی کے میں نے کی ہے گفتگو برسوں

رہی ہے ایک تصویر خیالی روبرو برسوں

ہوا مہمان آ کر رات بھر وہ شمع رو برسوں

رہا روشن مرے گھر کا چراغ آرزو برسوں

برابر جان کے رکھا ہے اس کو مرتے مرتے تک

ہماری قبر پر رویا کرے گی آرزو برسوں

چمن میں جا کے بھولے سے میں خستہ دل کراہا تھا

کیا کی گل سے بلبل شکوۂ درد گلو برسوں

اگر میں خاک بھی ہوں گا تو آتشؔ گرد باد آسا

رکھے گی مجھ کو سرگشتہ کسی کی جستجو برسوں

خواجہ حیدر علی آتش

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(1905) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Khwaja Haider Ali Aatish, Tasawur Se Kisi Ke Mein Ne Ki Hai Guftagu Barson in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Ghazal, and the type of this Nazam is Social Urdu Poetry. Also there are 133 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.9 out of 5 stars. Read the Social poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Khwaja Haider Ali Aatish.