Roz Kehte Thay Kabhi Ghair Ke Ghar Dekh Liya

روز کہتے تھے کبھی غیر کے گھر دیکھ لیا

روز کہتے تھے کبھی غیر کے گھر دیکھ لیا

آج تو آنکھ سے اے رشک قمر دیکھ لیا

کعبۂ دل سے ملی منزل مقصود کی راہ

یار کا ہم نے اسی کوچے میں گھر دیکھ لیا

جانب غیر اشارہ جو ہوا جانتے ہیں

ہم نے خود آنکھ سے دیکھا کہ ادھر دیکھ لیا

کون سوتا ہے کسے ہجر میں نیند آتی ہے

خواب میں کس نے تمہیں ایک نظر دیکھ لیا

جب کہا میں نے نہیں کوئی چلو میرے گھر

خوب رستے میں ادھر اور ادھر دیکھ لیا

بولے چلنے میں نہیں عذر مجھے کچھ لیکن

خوف یہ ہے کسی مفسد نے اگر دیکھ لیا

آہوں سے آگ لگا دیں گے دل دشمن میں

چھپ کے رہتے ہیں جہاں آپ کا گھر دیکھ لیا

بچ گیا نقد دل اب کے تو نظر سے اس کی

آئے گا پھر بھی اگر چور نے گھر دیکھ لیا

لالہ مادھو رام جوہر

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(660) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of LALA MADHAV RAM JAUHAR, Roz Kehte Thay Kabhi Ghair Ke Ghar Dekh Liya in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Ghazal, and the type of this Nazam is Social Urdu Poetry. Also there are 84 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.5 out of 5 stars. Read the Social poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of LALA MADHAV RAM JAUHAR.